Or Sukoon Esa…

Dard itna k har rag me hai mehshar barpa…

Or sukoon esa k mar jane ko ji chahta hai..

درد اتنا کہ ہر رگ میں ہے محشر برپا

اور سکون ایسا کہ مر جانے کو جی چاہتا ہے
[فیض احمد فیض]

مجھے یاد ہے جولائی ،۲۰۱۵ کے اوائل میں یہ شعر میری واٹس ایپ کی ڈی پی پر لگا ہوا تھا 

اور آج وہ صفحات ہی میں نے حرف غلط کی طرح پھاڑ کے پھینک دئیے ہیں۔

Advertisements

One Reply to “Or Sukoon Esa…”

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s