چھوُ لوں میں رنگ سبھی , اور  تتلیاں آزاد کردوں

میں نہیں جانتی آپ میں سے کسی نے کبھی ایسی خواہش کی ہو گی یا نہیں مگر میرا دل اب چاہتا ہے شدت سے 

رنگوں کو چھونے کا

میری انگلیاں سب رنگ میں ڈھل جائیں اور شفاف پانیوں میں رنگین لہریں سی بنتی چلی جائیں 

ست رنگی خوبصورت لہریں

میں ہاتھ پھیلاؤں اور تتلیاں اپنے پروں میں قدرت کی تمام تر صناعی سمیٹے میری ہتھیلیوں میں اتر آئیں 

اور دعا بن کر اڑ جائیں 

ان لوگوں کی طرف جن سے میں محبت کرتی ہوں. جنکو میں یاد کرتی ہوں

میں آسمان کی طرف اشارہ کروں اور پریوں کے جادو کی طرح اندھیری راتوں میں تارے جگمگا جائیں

خواہش اور تخیل کی کوئی حد نہیں ہوتی اور وہ بھی اک لڑکی کے خواب

ہرے , نیلے, گلابی, سنہرے , روپہلے ,بے حد کچےسے خواب

..کیوں قید کریں انکو ہم

?..کیا آپ نے کبھی ایسا سوچا,چاہا کبھی

Advertisements

6 Replies to “چھوُ لوں میں رنگ سبھی , اور  تتلیاں آزاد کردوں”

  1. First off I want to say wonderful blog! I had a quick question in which I’d like to ask if you do not mind.
    I was interested to know how you center yourself and clear
    your head before writing. I have had difficulty clearing my mind in getting
    my ideas out. I truly do enjoy writing but it just seems like the first 10 to 15 minutes are lost simply just trying to figure out how to begin. Any ideas or tips?
    Many thanks!

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s